خبرگزاری شبستان

شنبه ۲۹ مهر ۱۳۹۶

السبت ١ صفر ١٤٣٩

Saturday, October 21, 2017

وقت :   Saturday, March 18, 2017 خبر کوڈ : 67273
حجۃ الاسلام اعیان منش:
ہماری بہترین حالت،کائنات کی بہارکے مرہون منت ہے
خبررساں ایجنسی شبستان: سوال یہ ہےکہ انسانوں کی بہاراوریہ احسن الاحوال(بہترین حالت) کا کیا مطلب ہے؟ ہم امام زمانہ علیہ السلام کی زیارت میں پڑھتے ہیں کہ السلام علیک یا ربیع الانام۔

خبررساں ایجنسی شبستان کی رپورٹ کے مطابق یہ ایک اہم سوال ہے کہ انسانوں کے اندریہ بہترین حالت اوربہارسے کیا مراد ہے؟ یہ جو ہم کہتے ہیں کہ ہمیں روحانی طور پربہترین حالات میں قراردے اور جس طرح طبعی اورمادی عالم کو بہارعطا کی ہے اسی طرح ہمیں بھی بہارعطا فرما، اس کیا مطلب ہے؟ انسان کے اندراس بہاراوراحسن الاحوال کا کیا مطلب ہے؟ ہم امام زمانہ علیہ السلام کی زیارت میں پڑھتے ہیں السلام علیک یا ربیع الانام۔ اس سلام کا بہت عمیق معنی ہے اورہم اس سلام میں امام علیہ السلام کی خدمت میں عرض کرتے ہیں کہ آپ پرسلام کہ آپ کائنات کی موجودات کی بہار ہیں۔ یہ انام فقط انسانوں کو شامل نہیں ہے بلکہ کائنات کی تمام موجودات کو شامل ہے اورہم اس سلام میں امام علیہ السلام کی خدمت میں عرض کرتے ہیں کہ آپ کی تشریف فرمائی سے دنیا میں بہارآئے گی۔

دینی مبلغ حجۃا لاسلام والمسلمین جلال اعیان منش نے کہا ہےکہ ہم سب جانتے ہیں کہ بہارکے آنے سے عالم طبعی اورمادی کا غم واندوہ ختم ہوجاتا ہے اوربہارکے آنے سےعالم طبعی اورمادی خوش ہوجاتا ہے۔ لوگ بھی اس چیزکے درپے ہیں کہ وہ بہارکے آنے سے بہترین حالت پیدا کریں لیکن یہ بہترین حالت اس وقت تک حاصل نہیں ہوتی ہےجب تک انسان کی روح، روحانیت اورمعنویت سے سرشارنہ ہو۔ درحقیقت انسان کا جسم اورذہن اس کی روح کے تابع ہے لہذا اگر انسان جسم اورذہن کی خوشی سے روح کی خوشی تک پہنچنا چاہے تواس نےالٹا راستہ طے کیا ہے بلکہ اگرانسان کی روح خوش ہو تو اس صورت میں انسان کا جسم اورذہن بھی بھی بہترین حالت میں ہوتے ہیں۔

اب اگرہم اس  زاویے سےموضوع کی طرف نگاہ کریں تو دیکھتے ہیں کہ اگر موسم بہار کے درختوں کی طرح ہمارا دل سرسبز وشاداب نہیں ہوا ہے اورہم اپنےاندربہاری حالت کو محسوس نہیں کرتے ہیں تو اس کی وجہ یہ ہےکہ امام زمانہ علیہ السلام سے ہمارا ارتباط بہت کم ہے۔ آپ خیال کرتےہیں کہ موسم بہارمیں کیوں ایک درخت سرسبزوشاداب ہوتا ہے ؟ اس کی وجہ یہ ہے کہ اس درخت کا موسم بہار سے ارتباط ہےاوراسی ارتباط کی وجہ سے وہ پھل داربنتا ہے۔ ہم انسانوں کی بھی یہی صورتحال ہے کیا یہ ممکن ہے کہ بہار کے مالک کے ساتھ ارتباط کے بغیر انسان اپنی باطنی بہارتک پہنچ سکتا ہے؟ ہم اگر اپنے اندرنشوونما اوربہترین حالت کو دیکھنا چاہتے ہیں تواس بہترین حالت کا ضامن وہی ہستی ہے کہ جس کی خدمت میں عرض کرتے ہیں: السلام علیک یا ربیع الانام۔

اگرکوئی پریکٹس کرے اوردن رات اپنےمولا کی یاد میں ہو تو اس کا وجود بہاری ہوجائےگا کیونکہ آپ انسانوں کی بہار ہیں اورجب تک انسان اپنے اوراپنے معاشرے کےاندراس حقیقت کی تجلی کو پیدا نہ کرے تو وہ اپنی  مدنظربہارتک نہیں پہنچ سکتا ہے۔ انسانوں کی بہاراس وقت آتی ہےکہ جب حضرت ولی عصرعلیہ السلام ہم پرتوجہ کریں ("وَانْظُرْ إِلَیْنا نَظْرَةً رَحیمَةً.)۔ جس طرح کہ سورہ آل عمران کی آخری آیہ میں فرماتا ہے:"يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اصْبِرُوا وَصَابِرُوا وَرَابِطُوا وَاتَّقُوا اللَّهَ لَعَلَّكُمْ تُفْلِحُونَ) اے ایمان لانے والے صبر کرو اوراستقامت کرو اوراپنی سرحدوں کی حفاظت کرو اورتقویٰ الہی اختیارکرو شاید کہ تم نجات پا جاو۔ اس آیہ مجیدہ میں ایک لفظ آیا ہے(رابطو)۔ تمام مفسرین کا  اتفاق ہےکہ اس (رابطوا) سے مراد وہی امام زمانہ علیہ السلام سے رابطہ ہے، یعنی اگرکوئی نجات اورکامیابی کےمقام پرپہنچنا چاہتا ہے تو وہ اپنے امام زمانہ عجل اللہ تعالیٰ فرجہ الشریف کےساتھ ارتباط قائم کرکے اس حقیقت تک پہنچ سکتا ہے۔

۶۱۶۵۷۶

 

تبصرے

نام :
ایمیل:(اختیاری)
رائے ٹیکسٹ:
ارسال

تبصرے

سروس کی خبروں کی سرخیاں

ہنر، جنگ و دہشت سے مقابلے کا ہتھیار ہے

شبستان نیوز : وزارت امور خارجہ کے ترجمان بہرام قاسمی نے ’’اعلان گفتگو‘‘ نامی پوسٹرز کی نمائش میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس نمائش میں موجود ہر پوسٹر اتنی طاقت رکھتا ہے کہ سینکڑوں ڈونلڈ ٹرامپ کو جواب دے سکے۔

منتخب خبریں