خبرگزاری شبستان

شنبه ۲۵ آذر ۱۳۹۶

السبت ٢٨ ربيع الأوّل ١٤٣٩

Saturday, December 16, 2017

وقت :   Wednesday, October 11, 2017 خبر کوڈ : 69679

قاتلانِ امام حسین (ع) سے انتقام کی کیفیت
شبستان نیوز : شیعیان اہل بیتؑ، انسانیت کے نجات دہندہ مہدی موعود (عج)کے ظہور کو خون حسین علیہ السلام کا انتقام سمجھتے ہیں اور ہر جمعہ کی صبح کو «أَیْنَ الطّالِبُ بِدَمِ الْمَقْتُولِ بِکَرْبَلاءَ» [کہاں ہو اے قتیلِ کربلا کے خون کے وارث!] کی پرسوز صدا کے ذریعے ان کے ظہور کی دعا کرتے ہیں۔

شبستان نیوز  ایجنسی  کے شعبہ مہدویت کے نمائندے کی رپورٹ:

مسجد جمکران کے ٹیلیگرام چینل پر ’’انتقام کیا ہے؟ منتقم کون ہے؟‘‘ کے عنوان سے ایک مضمون تحریر کیا گیا ہے:

گذشتہ چودہ صدیوں کے دوران تاریخ نے بہت سے ایسے  مواقع دیکھے ہیں جو امام حسین علیہ السلام کے قیام کربلا کے ساتھ جڑے ہوئے ہیں۔ تاریخ نے وہ دن بھی دیکھا کہ جب امام حسین علیہ السلام کے کچھ اصحاب نے اپنی زندگیاں امام پر قربان کر دیں اور ایثار و قربانی کی مثالیں قائم کیں اور اس کے بعد تاریخ کی نگاہوں میں وہ ایام بھی آئے جب کوفہ کے بسنے والوں میں سے ایک گروہ نے امام حسین علیہ السلام کے خون کا انتقام لینے کے لیے قیام کیا، جنہیں ’’توابین‘‘ کے لقب سے یاد کیا جاتا ہے۔

مختار ثقفی کا قاتلین امام حسین علیہ السلام سے انتقام لینا بھی تاریخ میں ثبت ہوا۔ اور وہ دور بھی آیا کہ ائمہ علیہم السلام خود مجالس عزا کا اہتمام کرتے اور ان مجلسوں کو تشیع کی تبلیغ کا اہم ذریعہ سمجھتے۔

اسی طرح شیعیان اہل بیتؑ انسانیت کے نجات دہندہ   مہدی موعود (عج)کے ظہور کو خون حسین علیہ السلام کا انتقام سمجھتے ہیں اور ہر جمعہ کی صبح کو «أَیْنَ الطّالِبُ بِدَمِ الْمَقْتُولِ بِکَرْبَلاءَ» [کہاں ہو  اے قتیلِ کربلا کے خون کے وارث!] کی پرسوز صدا کے ذریعے ان کے ظہور کی دعا کرتے ہیں۔

*۔ استاد محمد شجاعی کے سلسلہ بحث«عزادار حقیقی» سے ماخوذ

660255

 



تبصرے

نام :
ایمیل:(اختیاری)
رائے ٹیکسٹ:
ارسال

تبصرے

منتخب خبریں