خبرگزاری شبستان

دوشنبه ۳۰ بهمن ۱۳۹۶

الاثنين ٤ جمادى الثانية ١٤٣٩

Monday, February 19, 2018

وقت :   Saturday, October 21, 2017 خبر کوڈ : 69875

عاشورا کا پیغام؛ حریت، بصیرت، عبودیت، عدالت اور عزت ہے
شبستان نیوز : رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے وصال کے بعد اسلامی معاشرے کے سیاسی، اجتماعی، اقتصادی اور ثقافتی حالات الٹ پلٹ کر رہ گئے۔ اس کی بنیادیں ہل کر رہ گئیں اور اسلامی معاشرہ اس حالت کو پہنچ گیا کہ امام حسین علیہ السلام کھڑے ہوئے اور اپنے خون سے اسلام کے دامن سے لپٹنے والے ننگ و عار کے دھبوں کو دھو ڈالا اور پوری نوع انسانیت کے لیے ایک حسینی مدرسے کی بنیاد رکھی۔

شبستان نیوز ایجنسی کے نمائندے کی رپورٹ :

قرآن و حدیث یونیورسٹی کی علمی کمیٹی کے رکن مصطفیٰ دلشاد تہرانی ایک ٹیلیگرام چینل پر لکھتے ہیں :

رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے وصال کے بعد اسلامی معاشرے کے سیاسی، اجتماعی، اقتصادی اور ثقافتی حالات الٹ پلٹ کر رہ گئے۔ اس کی بنیادیں ہل کر رہ گئیں۔ اسلامی معاشرے کے اس زوال کا نتیجہ یہ نکلا کہ اس پر معاویہ جیسا حکمران حاکم ہو گیا اور پھر اس سے بھی بڑھ کر یہ کہ یزید جیسا لا ابالی اور بے دین انسان مسلمانوں کا حاکم بن بیٹھا۔ زبردستی بیعتیں لی گئیں، معاشرتی مساوات درہم برہم ہو گئی۔ طبقاتی نظام وجود میں آ گیا۔ عدالت و انصاف کا گلہ گھونٹ دیا گیا۔ اسلام کے لباس میں جاہلیت حاکم ہو گئی۔ آزادیاں سلب ہو گئیں۔ مسلمانوں کا بیت المال حکمرانوں کا ذاتی مال بن گیا۔ بے گناہ لوگ یا تو قتل کیے جانے لگے یا زندانوں کے حوالے۔

ایسے میں امام حسین علیہ السلام نے قیام کیا اور اسلام کے دامن سے ان گندگیوں کو اپنے خون سے دھو ڈالا۔

ہاں ، عاشورا کا پیغام؛ حریت، بصیرت، عبودیت، عدالت اور عزت ہے۔

660567

تبصرے

نام :
ایمیل:(اختیاری)
رائے ٹیکسٹ:
ارسال

تبصرے

سروس کی خبروں کی سرخیاں

آیت اللہ جاودان:

متقی لوگ بہشت میں اپنی مرضی کے مطابق زندگی بسر کریں گے

سماجی: آیت اللہ جاودان نے کہا کہ قرآن کریم متقی لوگوں کی صفات کو یوں بیان کرتا ہے کہ بہشت کے مقامات متقی لوگوں کی مرضی کے مطابق ہوں گے۔

منتخب خبریں