خبرگزاری شبستان

چهارشنبه ۴ مهر ۱۳۹۷

الأربعاء ١٦ المحرّم ١٤٤٠

Wednesday, September 26, 2018

وقت :   Tuesday, February 13, 2018 خبر کوڈ : 71468

مراکش میں قرآنی خواتین کا شدت پسندی کےساتھ مقابلہ
خبررساں ایجنسی شبستان:مراکش میں قرآنی امورکی ماہرخواتین شدت پسندی کا مقابلہ کررہی ہیں۔

خبررساں ایجنسی شبستان نے اٹلانٹک کے حوالے سے نقل کیا ہےکہ مراکش میں قرآنی امورکی ماہرخواتین اس ملک میں موجود دہشتگردی اورشدت پسندی کا مقابلہ کررہی ہیں۔

قابل ذکر ہے کہ دہشتگردوں کے استعمال کے لحاظ سےمراکش ایک آفت زدہ علاقہ ہےاگرچہ 2011ء سے لےکراس وقت تک اس سرزمین پرکوئی اہم دہشتگردانہ حملہ نہیں ہوا ہے۔ جبکہ مراکشی لوگوں کو یورپ میں داعش کے دہشتگردانہ حملوں کا سامنا کرنا پڑا ہے اور 2015ء میں فرانس کے دارالحکومت پیرس میں ہونے والے دہشتگردانہ حملوں میں بھی ملوث شخص کا تعلق مراکش سے تھا اوراسی طرح برسلز میں بھی ہونے والے دہشتگردانہ حملوں کے پیچھے مراکسی افراد کا ہاتھ تھا۔

مراکس کی وزارت داخلہ کی جانب سے پیش ہونے والی رپورٹ کے مطابق 2012ء سے لے کراس وقت تک تقریبا 1600مراکشی شدت پسند گروہوں بالخصوص دہشتگرد گروہ داعش کے ساتھ ملحق ہوگئے ہوئے ہیں۔

اب اسی چیزکے پیش نظرمراکش کی قرآنی امورکی ماہرخواتین نے شدت پسندی کا مقابلہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے تاکہ ان کے جوان دہشتگرد گروہوں کی طرف مائل نہ ہوں۔

اس سنٹرکےپروگراموں کےسربراہ عبدالسلام الازعرنےاس بارے میں کہا ہےکہ مراکش کی سینکڑوں خواتین اس سنٹرسےفارغ التحصیل ہوچکی ہیں کہ جو اس میدان میں بہت زیادہ موثرکردارادا کرسکتی ہیں۔

689405

 

 

تبصرے

نام :
ایمیل:(اختیاری)
رائے ٹیکسٹ:
ارسال

تبصرے

سروس کی خبروں کی سرخیاں

حجت الاسلام صادقی:

حضرت امام زمان(عج) کی حضرت علی اکبر(ع) سے شباہت

حجت الاسلام صادقی نے کہا حضرت علی اکبر(ع) کی خصوصیات میں سے ہے کہ ہمیشہ حالت جنگ میں رہتے تھے اور اس سے بڑھ کر اور کوئی چیز نہیں ہے کہ انسان اپنے زمانے کے امام کی شناخت کے بعد اپنی جان کو اپنے امام کیلئے قربان کرے۔

منتخب خبریں