خبرگزاری شبستان

سه شنبه ۲۰ آذر ۱۳۹۷

الثلاثاء ٣ ربيع الثاني ١٤٤٠

Tuesday, December 11, 2018

وقت :   Tuesday, February 20, 2018 خبر کوڈ : 71588

ایام فاطمیہ میں خطبہ فدکیہ پرتوجہ دینےکی ضرورت ہے
خبررساں ایجنسی شبستان: ایام فاطمیہ میں شدت پسندانہ اورجذبانی اقدامات کی بجائےحضرت زہرا سلام اللہ علیہا کےخطبہ فدکیہ کی تلاوت کی ترویج کرکے اس خطبہ کے معارف کو جوان نسل،اہل سنت اورشیعوں کے درمیان منتقل کرسکتے ہیں۔

خبررساں ایجنسی شبستان کی رپورٹ کےمطابق ایام فاطمیہ میں شدت پسندانہ اورجذبانی اقدامات کی بجائے حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کےخطبہ فدکیہ کی تلاوت کی ترویج کرکےاس خطبہ کےمعارف کوجوان نسل،اہل سنت اورشیعوں کے درمیان منتقل کرسکتے ہیں۔ اس قسم کےاقدامات انصاف پر مشتمل آگاہی میں بہت زیادہ موثرواقع ہوں گے۔ لہذا ہم ذاکرین اہل بیت علیہم السلام کو لعن وطعن کرنے کی بجائے ایسےمثبت اقدامات پرتوجہ دینی چاہیےاوراہل بیت علیہم السلام کے ذکراورمصائب کی مجالس کو علماء پسند ہونا چاہیے۔ آج ہمیں معرفتی ماحول کی ضرورت ہے۔

حوزہ علمیہ کےگروہ تاریخ کے سربراہ حجۃ الاسلام والمسلمین امیرعلی حسنلو نےمسلمانوں کے درمیان وحدت کے ماحول میں حضرت فاطمہ زہراسلام اللہ علیہا کی شہادت سے مربوط موضوعات اورمسائل کو بیان کرنےکی کیفیت کے بارے میں کہا ہےکہ آج ہم اشتراکیت اورسیکولردنیا کے  مقابلے میں عالم اسلام کی صف میں واقع ہیں۔ لہذا مسلمانوں کو آپس کی لڑائی جھگڑے میں اپنی توانائی اورطاقت کو خرچ نہیں کرنا چاہیے کیونکہ اس طرح ان کی طاقت کمزورہوجائےگی۔ جب ہم حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت جیسے واقعہ کو بیان کرتے ہیں تو ممکن ہےکہ یہ چیز وحدت کو نقصان پہنچادے۔ لہذا سوال یہ ہے کہ حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی شہادت اورزندگی سے مربوط حقائق کو کس طرح بیان کیا جائے کہ ان حقائق کو بیان کرنے کے ساتھ ساتھ اسلامی مذاہب کے درمیان موجود وحدت کو بھی نقصان نہ پہنچے؟

آپ دیکھیں اگر تعصب اورشدت پسندانہ اعتقادات سے ہٹ کر تاریخٰ مسائل اورواقعات کو بیان کیا جائےتو اس میں کوئی مشکل پیش نہیں آتی ہے البتہ شرط یہ ہےکہ کسی کی اہانت نہ کی جائے۔ نکتہ یہ ہےکہ جب آپ اہل سنت کی کتابوں کی طرف رجوع کرتے ہیں تو دیکھتے ہیں کہ حضرت فاطمہ سلام اللہ علیہا کےفضائل بھی بیان ہوئے ہیں اورحاکمیت کی طرف سے آپ کو ملنے والی دھمکیوں کا بھی ذکرآیا ہے لہذا اسے چھپایا نہیں جاسکتا ہے۔ لیکن اگرایک غیرعلمی اورجذباتی ماحول میں اگریہ حقائق بیان کیے جائیں تو اس کے کچھ اورنتائج نکلیں گے اوراگرانصاف کے ماحول اورحقائق کو بیان کرنے کے ہدف کے تحت بیان کیے جائیں تو پھراس کے بہترنتائج نکل سکتے ہیں۔

میں اس مطلب کی حمایت کرتا ہوں کہ ان حساس اورظریف مسائل کو ایسےذاکرین کے توسط سے بیان نہیں ہونا چاہیےکہ جو واقع کے خلاف اورجذباتی مطالب کو بیان کرتے ہیں۔ انہیں کنٹرول کرنا چاہیے اورحقائق کو بیان کرنےکے بہانے سےاہانت کے ماحول میں داخل نہیں ہونا چاہیے۔ لیکن دوسری جانب بھی یہ نہیں سوچنا چاہیےکہ اب جب کہ اس حوالے سے ہرقسم کی بات ممکن ہے تفرقےکا باعث بن جائے لہذا تاریخ اورسیرت کو مخفی کردینا چاہیے۔ جیسا کہ اشارہ کیا گیا ہےکہ اہل سنت نے بھی حضرت زہرا سلام اللہ علیہا،ان کی وصیت اوروفات کی طرف اشارہ کیا ہے۔ لہذا یہ چیز ہمارے ذاکرین اورخطباء کےلیے بہترین مطالب ہوسکتے ہیں البتہ کسی اہانت کے بغیرکیونکہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اورمکتب اہل بیت علیہم السلام میں اہانت کا کوئی مقام نہیں ہے۔ پیغمبراکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے کبھی مشرکین یہاں تک کہ ان کے بتوں کی بھی اہانت نہیں  کی ۔ بنابریں ہم اہانت کرنے والوں کی قطارسےاپنےآپ کو جدا کرسکتے ہیں تاہم لوگوں کو آگاہ کرنے کے موضوع پربھی خاموش نہیں رہنا چاہیے البتہ یہ شرط یہ ہےکہ حقائق کو بیان کرنےکےماحول میں یہ آگاہی ہونی چاہیے۔

میرے خیال میں ہم حقائق کو بیان کرنےاورلوگوں کی آگاہی اورمعلومات میں اضافہ کرنے کی نظرسےخطبہ فدکیہ کو بیان کرسکتے ہیں۔ آپ دیکھیں کہ اہل سنت اورشیعوں نےبھی اس خطبے پر بہت زیادہ شروحات لکھی ہیں۔ کیونکہ حضرت زہرا سلام اللہ علیہا نےاس خطبے میں بعثت سے پہلے لوگوں کی جہالت کی صورتحال کو بیان کیا ہے اوریاددہانی کروائی ہےکہ اب بہترنہیں ہے کہ لوگ دوبارہ جاہلیت کے دورکی طرف پلٹ جائیں اورپیغمبراکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی اتنی زیادہ زحمات کو پامال کردیں۔ اسی درمیان اہل بیت علیہم السلام کے مقام ومنزلت کی طرف بھی اشارہ کرتی ہیں۔یہ کوئی معمولی خطبہ نہیں ہے اورایک عالم کی تعبیرکےمطابق یہ خطبہ ایسی جامعیت اورزیبائی پرمشتمل ہے کہ جو نہج البلاغہ کےخطبوں کی برابری کرتا ہے۔آپ دیکھیں کہ حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کیسی ادبیات، جامعیت، خوبصورتی اورانصاف کی مراعات کرتے ہوئےاس خطبے میں لوگوں کو آگاہ کرتی ہیں۔ ہمیں بھی حضرت زہرا سلام اللہ علیہا کی اسی سیرت پرعمل کرتے ہوئے اسی طرح کا اقدام کرنا چاہے۔

690486

 

 

تبصرے

نام :
ایمیل:(اختیاری)
رائے ٹیکسٹ:
ارسال

تبصرے

سروس کی خبروں کی سرخیاں

8ویں بین الاقوامی کانگریس امام سجاد(ع) کا آغاز

سماجی: اسلامی جمہوریہ ایران کے شہر بندرعباس میں 8ویں بین الاقوامی کانگریس امام سجاد(ع) کا آغاز ہوچکا ہے جس میں دنیا بھر سے مسلمان دانشور، علماء، مفکرین اور عمائدین شرکت کررہے ہیں۔

منتخب خبریں