خبرگزاری شبستان

سه شنبه ۳ مهر ۱۳۹۷

الثلاثاء ١٥ المحرّم ١٤٤٠

Tuesday, September 25, 2018

وقت :   Tuesday, June 12, 2018 خبر کوڈ : 72564

کیا ظہور امام زمانہ (عج) کے ساتھ کوئی نیا دین آئے گا؟!
شبستان نیوز : یہ کہنا درست نہیں ہے کہ جب امام زمانہ عجل اللہ تعالیٰ فرجہ الشریف تشریف لائیں گے تو کوئی نیا دین لے کر آئیں گے۔ نہیں بلکہ وہ حقیقی دین اور پیغمبر اکرمﷺ اور اہل بیت علیہم السلام کی حقیقی سیرت کی طرف لوگوں کو دعوت دیں گے حتی کہ فیصلوں اور حکمرانی کے طور طریقوں میں بھی وہ اسی طرح عمل کریں گے۔

شبستان نیوز کے شعبہ مہدویت کی رپورٹ :

علوم و ثقافت اسلامی تحقیقی مرکز کی علمی کمیٹی کے رکن حجت الاسلام و المسلمین رحیم کارگر اپنی کتاب ’’مہدویت اور درانِ ظہور‘‘ میں لکھتے ہیں:

سوال کیا جاتا ہے کہ کیا ظہور امام زمانہ (عج) کے ساتھ کوئی نیا دین آئے گا؟!

اس کے جواب میں ہم عرض کریں گے کہ روایات جو ہمارے پاس ہیں ان میں ہم دیکھتے ہیں:

امام جعفر صادق علیہ السلام فرماتے ہیں: اذا خرج القائم ياتى بامر جديد و كتاب جديد و سنه جديده و قضاء جديد۔ (جب قائمؑ ظہور کریں گے تو وہ نئے احکام، نئی کتاب، نیا طریقہ اور نیا فیصلے لے کر آئیں گے۔)

دوسری روایت میں ہے: اذا قام القائم جاء بامر جديد كما دعا رسول الله فى بدو الاسلام الى امر جديد۔ (جب قائمؑ ظہور کریں گے تو نیا دین لے کر آئیں گے جیسا کہ رسول خداﷺ نے آغاز اسلام میں ایک نئے امر کی طرف دعوت دی تھی۔)

ان روایات کی روشنی میں ہم کہہ سکتے ہیں کہ جب امام زمانہ عجل اللہ تعالیٰ فرجہ الشریف تشریف لائیں گے تو کوئی  نیا دین لے کر نہیں آئیں گے بلکہ وہ حقیقی دین اور پیغمبر اکرمﷺ اور اہل بیت علیہم السلام کی حقیقی سیرت کی طرف لوگوں کو دعوت دیں گے حتی کہ فیصلوں اور حکمرانی کے طور طریقوں میں بھی وہ اسی طرح عمل کریں گے۔

709427

تبصرے

نام :
ایمیل:(اختیاری)
رائے ٹیکسٹ:
ارسال

تبصرے

سروس کی خبروں کی سرخیاں

حجت الاسلام صادقی:

حضرت امام زمان(عج) کی حضرت علی اکبر(ع) سے شباہت

حجت الاسلام صادقی نے کہا حضرت علی اکبر(ع) کی خصوصیات میں سے ہے کہ ہمیشہ حالت جنگ میں رہتے تھے اور اس سے بڑھ کر اور کوئی چیز نہیں ہے کہ انسان اپنے زمانے کے امام کی شناخت کے بعد اپنی جان کو اپنے امام کیلئے قربان کرے۔

منتخب خبریں