خبرگزاری شبستان

سه شنبه ۲۰ آذر ۱۳۹۷

الثلاثاء ٣ ربيع الثاني ١٤٤٠

Tuesday, December 11, 2018

وقت :   Tuesday, July 17, 2018 خبر کوڈ : 72781
مردشا کرمنیٹزر:
یہودی ملک بنانےکے بل نےاسرائیل کےچہرے سےنقاب الٹ دیا ہے
خبررساں ایجنسی شبستان: ایک یہودی ملک نامی بل کی منظوری کے لیےکی جانے والی کوششوں کی وجہ سے صہیونی حکومت کے وزیراعظم کوبہت زیادہ تنقید کا سامنا ہے۔

خبررساں ایجنسی شبستان نے گارڈین کےحوالے سے نقل کیا ہے کہ ایک یہودی ملک کے بل کی منظوری کے لیے کی جانے والی کوششوں نے صہیونی حکومت کو آشوب میں مبتلا کردیا ہے۔

اسرائیلی سیاستدان تقریبا گزشتہ نصف دہائی سے اس بل کی جزئیات پربحث وگفتگو کررہے ہیں اوراب صہیونی حکومت کے وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو رواں مہینےمیں اس بل کو منظور کروانا چاہتے ہیں۔

یہ بل صہیونی حکومت کوایک دین اورملت پرمشتمل عوام کا ایک معاشرہ تشکیل دینے کی اجازت دیتا ہےتاکہ اس معاشرے کے تشخص اوراس کی خصوصیت کو ثابت کرسکے۔اسی طرح اس بل کی بنا پر خاص مقامات پریہودیوں کے مذہبی قوانین پرعمل کرنے کی اجازت ہوگی اورپھرعربی زبان سرکاری زبان نہیں رہے گی۔

نیتن یاہو نے رواں ہفتے دعویٰ کیا تھا کہ اسرائیل جمہوریت میں ہم انفرادی اورگروہی حقوق کی حمایت کو اہمیت دیں گےاوریہ ایک ضمانت شدہ مسئلہ ہے۔ تاہم اکثریت کو بھی حق حاصل ہے کیونکہ یہی اکثریت ہی ہے کہ جو حکومت کررہی ہے۔

 بیت المقدس کی ہبرو یونیورسٹی کےفیکلٹی آف حقوق کے استاد مردشای کرمنیٹزر نے اس بارے میں کہا ہےکہ اس بل نے اسرائیل کےچہرے سے نقاب الٹ دیا ہے۔

۷۱۶۴۳۶

 

 

تبصرے

نام :
ایمیل:(اختیاری)
رائے ٹیکسٹ:
ارسال

تبصرے

سروس کی خبروں کی سرخیاں

8ویں بین الاقوامی کانگریس امام سجاد(ع) کا آغاز

سماجی: اسلامی جمہوریہ ایران کے شہر بندرعباس میں 8ویں بین الاقوامی کانگریس امام سجاد(ع) کا آغاز ہوچکا ہے جس میں دنیا بھر سے مسلمان دانشور، علماء، مفکرین اور عمائدین شرکت کررہے ہیں۔

منتخب خبریں